کافر کافر کی واپسی۔محمد حنیف

بی بی سی اردو میٹرک کے امتحانوں کے بعد آنے والی چھٹیوں میں لڑکپن اور جوانی کے بیچ میں جھولتے لڑکے زندگی کی کوئی نئی چیز دریافت کرتے ہیں۔ کوئی باڈی بلڈنگ کرنے لگتا ہے۔ کسی کو سونے کی لت لگ جاتی ہے۔ کوئی عشق ڈھونڈتا پھرتا ہے اور کوئی مسجد جا کر اذانیں دینے لگتا ہے۔ انھی لمبی اور بور دوپہروں میں ہمارے ایک کلاس فیلو نے کُفر ڈھونڈ لیا۔ ایک کونے میں جا کر شلوار کی جیب میں ہاتھ ڈال کر ایک پمفلٹ نکالا اور کہا اسے پڑھو اور سمجھو کہ یہ شیعہ ہمارے بارے میں کیا کہتے … Continue reading کافر کافر کی واپسی۔محمد حنیف

‎”ناصبیت تحقیق کے بھیس میں”

‎سید متین شاہ جی کے لئے سراپا سپاس ہوں کہ انہوں نے مولانا عبدالرشید نعمانی کی دوکتب ناصبیت تحقیق کے بھیس میں ‎اور یزید کی شخصیت اہل سنت کی نظر میں ‎ای میل کیں. آج کا دن اول الذکر کتاب کے مطالعہ میں گزرا. آخر میں پہنچ کر افسوس ہوتا ہے کہ کاش مولانا اسے مکمل کر سکتے تو محمود احمد ناصبی کی کتاب کا مکمل اور جامع جواب ہوتا. ‎ہمارے عہد میں اس موضوع پر بہت مستند اور علمی مواد آ چکا ہے ‎خلافت و ملوکیت اور اس کی حمایت ورد میں، نیز سید لعل حسین شاہ بخاری کی … Continue reading ‎”ناصبیت تحقیق کے بھیس میں”

جناب جاوید غامدی کے نظریاتی اساتذہ کا تصوف اور اہلبیت بارے رویہ

کراچی یونیورسٹی میں شعبہ تاریخ کی ریٹائرڈ استاد ڈاکٹر نگار سجاد ظہیر صاحبہ، جن کا ذاتی رجحان تکفیری خارجی گروہوں کی طرف ہے، نے چند روز قبل ایک پوسٹ استفساراً لکھی کہ ” علامہ تمنا عمادی،محمد جعفر شاہ پھلواروی اور غلام احمد پرویز تینوں ہی صوفی گھرانوں میں پیدا ہوئے اور خانقاہی ماحول میں پرورش پائی لیکن اس کے بعد تینوں ہی تصوف کے خلاف ہو گئے ۔ان کی یہ قلب ماھیت کیوں ہوئی؟ اسی “کیوں ” کی تلاش میں ہوں؟” ہم جب ان تین شخصیات کی تحقیقات و نظریات پر غور کرتے ہیں تو معلوم پڑتا ہے کہ نظامِ … Continue reading جناب جاوید غامدی کے نظریاتی اساتذہ کا تصوف اور اہلبیت بارے رویہ

دنیا کی اداس ترین کہانی

(حاشر ابن ارشاد) 1910 میں امریکہ کے ایک چھوٹے سے مقامی اخبار میں ایک اشتہار شائع ہوا “ہاتھ سے بُنے ہوئے چھوٹے بچے کے کپڑے اور ایک جھولا برائے فروخت۔ دونوں استعمال نہیں ہوئے” شاید اسی اشتہار کو پڑھنے والے کسی نامعلوم شخص نے برسوں بعد وہ کہانی تخلیق کی جو آج بھی دنیا کی اداس ترین کہانی سمجھی جاتی ہے۔ عام طور پر ہیمنگوے سے موسوم اس مختصر کہانی میں صرف چھ لفظ ہیں۔ For Sale: baby shoes , never worn ( برائے فروخت: بچے کے جوتے، جو کبھی پہنے نہیں گئے ) چھ لفظوں میں ماں کی محبت … Continue reading دنیا کی اداس ترین کہانی

“صرف علم”

رعایت اللہ فاروقی صلاح الدین کو اب تو فارغ التحصیل ہوئے بھی چھ سال ہوگئے۔ لیکن جب یہ پہلی بار کسی مدرسے بطور طالب علم جا رہا تھا تو جو سب سے اہم نصیحت اسے کی تھی، وہ یہ تھی کہ کبھی کبھار کوئی استاد سبق پڑھانے کے بجائے کسی بہانے سے وعظ شروع کردے گا اور یہ وعظ پورے پیریڈ پر محیط ہوگا۔ پیریڈ پورا ہوگا تو وہ اچانک گھڑی کو دیکھ کر کہے گا “ارے ! ! ! وقت گزرنے کا تو پتہ ہی نہ چلا، سبق تو آج رہ گیا” اس کا مطلب یہ ہوگا کہ آج … Continue reading “صرف علم”

خدا کی بستی میں بستا سائیں امر جلیل

مصنف : فرنود عالم یہ بات ہے اس وقت کی جب بھٹو صاحب وزیر اعظم تھے۔ کوئٹہ میں ایک خاتون سودا سلف لینے گھر سے نکلی تو ہر طرف شانتی تھی لیکن پلٹی تو قیامت کا منظر نامہ تھا۔ فراٹے بھرتی پولیس کی گاڑیاں آرہی ہیں اور دھول اڑاتی آگے بڑھ رہی ہیں۔ پولیس کے چاق و چوبند دستے گاڑیوں سے اتر رہے ہیں اور پھرتی سے یہاں وہاں پوزیشن سنبھال رہے ہیں۔ نیچے سڑک پر اوپر عمارتوں پر شِکرہ نظر بندوقچی سانس بند انداز میں کھڑے ہو گئے ہیں۔ خاتون نے گھر کی طرف بڑھتے بڑھتے ایک اچھلتے پھدکتے … Continue reading خدا کی بستی میں بستا سائیں امر جلیل

یہ ان تنظیموں کے نام ہیں جنہیں ہماری اسٹیبلیشمنٹ نے بنایا اور پھر توڑ دیا

عمر کے 52 ویں سال سے گزر رہا ہوں۔ ان باون سالوں میں سپاہ صحابہ، ایم کیو ایم، لشکر طیبہ، حرکت المجاہدین، حرکت الانصار، جیش محمد، لشکر جھنگوی، اور تحریک لبیک وغیرہ بنتے اور بکھرتے دیکھ چکا ۔ یہ ان تنظیموں کے نام ہیں جنہیں ہماری اسٹیبلیشمنٹ نے وقتی ضرورت کے لئے بنایا اور پھر توڑ دیا۔ ان سب کے کارکنوں کو پکا یقین تھا کہ ان کی قیادت خلوص کے ساتویں آسمان پر ہے۔ مگر یہ لوگ یہ نہیں جانتے تھے کہ یہ ساتواں آسمان اسلام آباد کے سیونتھ ایوینیو کے قریب واقع ہے۔ تنظیمیں بنا کر انہیں قومی … Continue reading یہ ان تنظیموں کے نام ہیں جنہیں ہماری اسٹیبلیشمنٹ نے بنایا اور پھر توڑ دیا

زہریلی جڑی بوٹیاں

رعایت اللہ فاروقی ایک مشہور لطیفے کا کلائمکس کچھ یوں ہے کہ ہائے ہائے ! ابا حضور سچ کہا کرتے تھے کہ بیٹا جس چیز کو تمہاری اماں کے ہاتھ لگ جائیں اس سے برکت اٹھ جاتی ہے۔ ہماری اسٹیبلیشمنٹ کو بھی من جانب اللہ یہ خوبی عطاء ہوئی ہے کہ جس تنظیم کو اس کے ہاتھ لگے اس سے برکت ضرور اٹھی اور فساد ضرور پیدا ہوا۔ آپ مذہبی چھوڑئیے سیاسی جماعتوں میں سے بھی تشدد کی راہ صرف ان جماعتوں نے ہی اختیار کی جن کی پیدائش آنٹی اسٹیبلیشمنٹ کے بطن سے ہوئی تھی۔ مثلا ایم کیو ایم … Continue reading زہریلی جڑی بوٹیاں

“جو پیغمبر کی توہین کرے اسے قتل کردو”

ہمارے مذہبی اجتماعات میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی نسبت سے ایک حدیث بیان کی جاتی ہے کہ جو شخص نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو گالی دے اُسے قتل کردو۔ اِس روایت کے مکمل الفاظ کچھ یوں ہیں: حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدٍ الْعُمَرِيُّ الْقَاضِي، قَالَ: نَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ أَبِي أُوَيْسٍ، قَالَ: حَدَّثَنِي مُوسَى بْنُ جَعْفَرِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ أَبِيهِ جَعْفَرٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ جَدِّهِ، عَنْ حُسَيْنِ بْنِ عَلِيٍّ، عَنْ أَبِيهِ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ ﷺ: “مَنْ شَتَمَ الأَنْبِيَاءَ قُتِلَ، وَمَنْ شَتَمَ أَصْحَابِي جُلِدَ (المعجم الکبیر،رقم ۲۳۵) عبداللہ بن محمد عمری قاضی بیان … Continue reading “جو پیغمبر کی توہین کرے اسے قتل کردو”

وحید الدین خان

‎مولانا وحید الدین خان آزاد منش مذھبی اسکالر تھے اور اُن کے ہاں ویسے تو مذاھب عالم بارے بڑی وسعت پائی جاتی تھی لیکن وہ اہلسنت کے صوفی مسلک اور شیعہ فرقہ دونوں کو قرآن اور اسلام کے متوازی مذاھب خیال کرتے تھے – ان کا خیال تھا کہ تصوف اور شیعہ دین اسلام کا حصہ نہیں بلکہ یہ اُن کے متوازی مذاھب ہیں، اس بات کا اظہار انھوں نے کئی جگہوں پہ کیا- ‎مولانا وحیدالدین خان اور بھی کئی معاملات میں رائے کی شدت کے حامل تھے لیکن وہ کسی بھی فرقے اور مذھب کے ماننے والوں کو اُن … Continue reading وحید الدین خان