نام بگاڑنا درست نہیں ہے

جیسے کسی شخص کا نام بگاڑنا درست نہیں ہے؛ ایسے ہی کسی گروہ کا نام بگاڑنا بھی درست نہیں۔توجہ کیجیے:اہلِ حدیث کو “وہابی” کہنا نا درست ہے کہ وہ یہ لقب پسند نہیں کرتے۔عمومِ اہل سنت کو “ناصبی” کہنا درست نہیں ہے کہ وہ یہ لقب اپنے لیے مناسب نہیں جانتے۔اہلِ تشیع کو “رافضی” کہنا، ٹھیک نہیں ہے کہ یہ اُن کی دانست میں، اُن کے دشمنوں کا دیا ہوا لقب ہے۔اسی طرح درست لفظ مسیحی ہے نہ کہ “عیسائی”۔درست لفظ احمدی ہے نہ کہ “قادیانی”۔اسی طرح درست لفظ “پارسی” ہے نہ کہ مجوسی۔ہم کسی فرد یا گروہ کا درست … Continue reading نام بگاڑنا درست نہیں ہے

اہلِ سنت والجماعت کی لغوی سند

.ملا علی قاری نے شرح فقہ اکبر میں لکھا ہے کہ شیخ ابوالحسن اشعری معتزلہ کے بہت بڑے مبلغ تھے، اپنے استاد سے اختلاف کرکے معتزلہ مذہب چھوڑ دیا اور ان کے رد پر کمربستہ ہوگئے۔ ان کا رد انھوں نے سنت کے ذریعہ کیا اور اپنی جماعت کا نام اہلِ سنت والجماعت رکھا۔ انھوں نے یہ جماعت شیعہ کے مقابلہ میں نہیں بلکہ معتزلہ کے مقابلہ میں بنائی تھی۔ معتزلہ اکثر حنفی المذہب ہوتے تھے لیکن دوسرے مذاہب کے لوگ بھی معتزلہ ہوتے تھے۔ خود ابوالحسن اشعری شافعی المسلک تھے۔ چنانچہ اہلِ سنت والجماعت کے باقاعدہ نام سے سب … Continue reading اہلِ سنت والجماعت کی لغوی سند

سیدنا ابوطالب علیہ السلام کی شخصیت پر پی ایچ ڈی

سرور کائنات صلی الله علیہ والہ وسلم کے محبوب اور محسن چچا سیدنا ابوطالب علیہ السلام کی شخصیت پر پہلی مرتبہ پی ایچ ڈیوطنِ عزیز پاکستان سندھ کی شاھ عبدالطیف یونیورسٹی خیرپور میں پی ایچ ڈی کرنے والے اسکالر جناب خدمت علی چانڈیو صاحب لاڑکانہ والے نے ایم فل تھیسس کے لیئے مختلف مکاتبِ فکر کے علماء سے ایمانِ ابوطالبؑ کے حوالہ سے انٹرویو لیئےان میں سے ایک انٹرویو وطن عزیز پاکستان کے مشہورومعروف مذہبی ریسرچ اسکالر حضرت علامہ مولانا مفتی ابنِ مفتی ڈاکٹر گلزاراحمد انڑ صاحب، رئیس الجامعہ: مدرسہ جامعہ رضاءالمصطفیٰ (ملحقة بتنظیم المدارس اھلسنت پاکستان) نواب شاھ سندھ … Continue reading سیدنا ابوطالب علیہ السلام کی شخصیت پر پی ایچ ڈی

کیا تصوف کو نصاب کا حصہ ہونا چاہیے؟ محمد عامر خاکوانی

وزیراعظم عمران خان نے چند دن پہلے یہ بیان دیا کہ تصوف کا نصاب کا حصہ بنانا چاہیے۔ ویسے تووزیراعظم کی سطح کی شخصیت ”چاہیے “والا بیان دینے کے بجائے ہمیں صرف یہ بتائے کہ وہ ایسا کر رہے ہیں۔یہ ہونا چاہیے، وہ ہونا چاہیے وغیرہ کی خواہشات تو ہم عام لوگ کرتے ہیں۔ وزیراعظم فیصلہ ساز ہیں،وہ تو فیصلہ کر کے اس پر عملدرآمد کرائیں۔ خیر تصوف کو تعلیمی نصاب کا حصہ بنانے اور الگ سے کسی ادارے میں اس کی اعلیٰ تعلیم کی بات پر ہمارے ہاں سنجیدہ بحث ہونی چاہیے تھی۔ اس کے بجائے یہ اہم تجویز … Continue reading کیا تصوف کو نصاب کا حصہ ہونا چاہیے؟ محمد عامر خاکوانی

تکفیری انتہاپسندوں کی جانب سے خانہ کعبہ کا محاصرہ: 38 سال پہلے کیا ہوا تھا

عابد حسین بی بی سی اردو ڈاٹ کام، اسلام آباد سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے حال ہی میں امریکی اخبار نیو یارک ٹائمز کو دیے گئے انٹرویو میں کہا کہ ‘ہم ملک میں اسلام کو اس کی اصل شکل میں واپس لے جانا چاہتے ہیں اور سعودی معاشرے کو ویسا بنانا چاہتے ہیں جیسا وہ 1979 سے پہلے تھا۔’ اس حوالے سے کئی لوگوں کے ذہن میں یہ سوال اٹھا کہ 1979 میں ایسا کیا ہوا تھا جس نے سعودی معاشرے کی شکل تبدیل کر دی تھی؟ 1979 کو ویسے تاریخ میں اور واقعات کی … Continue reading تکفیری انتہاپسندوں کی جانب سے خانہ کعبہ کا محاصرہ: 38 سال پہلے کیا ہوا تھا

حدیث اور سنت کا فرق۔ ڈاکٹرطفیل ہاشمی

حدیث :ہر وہ بات، عمل اور تصویب جو رسول اللہ صل اللہ علیہ و آلہ و سلم کی طرف منسوب ہو نیز آپ کی ہر بدنی اور اخلاقی صفت کا بیان حدیث ہے خواہ وہ قبل از نبوت سے متعلق ہو یا بعد از نبوت سے.سنت :ہر وہ متواتر عمل جو رسول اللہ صل اللہ علیہ و آلہ و سلم سے منقول ہو اور بعد میں صحابہ کرام، تابعین اور ان کے بعد کے ادوار میں رائج رہا ہو، خواہ لفظاً متواتر نہ ہو. حدیث کی دو قسمیں ہیںتشریعی!غیر تشریعی! تشریعی سے مراد وہ امور ہیں جنہیں رسول اللہ صل … Continue reading حدیث اور سنت کا فرق۔ ڈاکٹرطفیل ہاشمی

خلافت راشدہ کے بارے میں میرے نتائج فکر ۔ ڈاکٹر طفیل ہاشمی

خلافت راشدہ کا عقیدے سے نہیں، تاریخی حقائق سے تعلق ہے. جہاں تک خلفاء راشدین کی عظمت کی بات ہے تو وہ سب السابقون الاولون ہیں. یہ وہ مقام ہے کہ کوئی بعد کا فرد اس فہرست میں نام نہیں لکھوا سکتا. قرآن میں سینکڑوں آیات ان کی عظمت کی گواہ ہیں. جہاں تک خلافت، اس کی ترتیب اور اس حوالے سے افضلیت ہے اس کا عقیدے سے تعلق نہیں ہے. بلکہ واقعاتی حقائق سے ہے. عقیدے تاریخی اور سماجی یا سیاسی حرکیات سے جنم نہیں لیتے. خلفاء راشدین کی ترتیب الہامی نہیں بلکہ جمہوری ہے. کسی آیت قرآنی یا … Continue reading خلافت راشدہ کے بارے میں میرے نتائج فکر ۔ ڈاکٹر طفیل ہاشمی

امت مسلمہ کا فکری جمود، اسباب واثرات ۔ ڈاکٹرطفیل ہاشمی

عصر حاضر میں امت مسلمہ کا فکری جمود ایک ایسا موضوع ہے جس پہ گفتگو کے کئی ایک زاویے ہیں ۔ پہلی بات تو یہ ہے کہ بہت سے حضرات کے لیے شاید یہ باور کرنا بھی مشکل ہو کہ امت کسی فکری جمود کا شکار ہے؛تاہم شاید اس میں کوئی دو رئے نہ ہو کہ امت کو اس وقت درپیش فکری تحدیات کے مشمولات کی ایک طویل فہرست مرتب کی جا سکتی ہے،مثلاً الحاد کا چیلنج،دہشت گردی، فرقہ واریت اور انتہا پسندی کا چیلنج، فکری جمود،فہمِ دین اور تعبیرِدین میں انحرافات، اخلاقی انحطاط اور سیاسی و تمدنی افکار کاتشتت،قیادت … Continue reading امت مسلمہ کا فکری جمود، اسباب واثرات ۔ ڈاکٹرطفیل ہاشمی

دیوبندیت اور مغالطے – ڈاکٹرطفیل ہاشمی

درجنوں پوسٹس میں اس امر کا اظہار کیا گیا کہ ملک میں دہشت گردی کے واقعات کی ذمہ داری ان دیوبندی مدارس پر ہے جو دہشت گردوں کی پنیری تیار کرتے ہیں.اس حوالے سے میں یہ بات واضح کرنا چاہتا ہوں کہ اگرچہ ایسے افراد اور ادارے خود کو دیوبندیت کی طرف منسوب کرتے ہیں اور دیوبندیت ان کی گھر کی لونڈی ہے، اس لیے ان سے یہ انتساب کوئی چھین نہیں سکتا۔ لیکن میرا گھرانا دیوبند کا تعلیم یافتہ تھا، حتی کہ ہمارے بچپن میں ہمارے گھروں میں اکابر دیوبند کا اس طرح تذکرہ ہوتا کہ ہم بچے اپنے … Continue reading دیوبندیت اور مغالطے – ڈاکٹرطفیل ہاشمی