جاوید احمد غامدی، پشتون ثقافت اور طالبان

جاويد احمد غامدی کا تعلق مذہب کے اس طبقے سے ہے جو جديد دنيا کے اکثر مقبول رجحانات کو يا تو اسلام سے ماخوذ سمجهتا ہے اور يا قرآنی متون کوکھینچ تان کر ان کی مطابقت جديد دنيا کے کچھ مقبول رويوں، تحريکوں اور نظريوں سے بنانے کی سعی کرتا ہے. غامدی صاحب کا اس کیمپ کے ساتھ تعلق جماعتِ اسلامی کی رکنيت حاصل کرکے ہی پيدا ہوا تھا، اس کے بعد ابن تیمیہ، امین احسن اصلاحی اور اس طرز کے خیالات سے متاثر ہوۓ – اب اپنے آپ کو خالص قسم کا صحيح مسلمان سمجھتے ہيںمذہب ميں’ معتدل’ کا … Continue reading جاوید احمد غامدی، پشتون ثقافت اور طالبان

رقص سماع اور دھمال صوفیاء میں ہزار سال سے زا‏ئد عرصے سے رائج رسم ہے

حال ہی میں کچھ خالصیت پسند ملاؤں نے مزارات مقدس اور عام شہریوں کے خلاف تکفیری دہشت گردوں کی کاروائیوں کے خلاف عوام کے غصّے کا رخ پھیرنے کے لئے رقص سمااوردھمال کے غیر شرعی ہونے بارے باتیں کرنا شروع کردی ہیں۔اور تاریخ کو مسخ کرنے کا کام سرانجام دے رہے ہیں۔ایسے مولوی تصوف کے دشمنوں اور اسلام کے تکثیریت پسند چہرے کو شرک و بدعت کہنے والی قوتوں کی ایجنٹی کے سوا کچھ نہیں کررہے –اس ویڈیو میں ترک قبرص کے مفتی شیخ عادل ناظم حقانی نقشبندی کے حلقہ صوفیاء کے رقص سماع کی تقریب کا منظر ہے۔آپ دیکھ … Continue reading رقص سماع اور دھمال صوفیاء میں ہزار سال سے زا‏ئد عرصے سے رائج رسم ہے

دہشت گردی کی حامی لابی ۔زید حامدکا تجزیہ

دفاعی تجزیہ نگار زید حامد کہتے ہیں کہ پاکستان میں تکفیری خارجی دہشت گردی کی حمایت یا خاموش تائید بدقسمتی سے ایک خاص طبقہ کرتا ہے جس کے علما یا تو دہشت گردی کے حامی یا اس کی خاموش تائید کرتے ہیں ۔مولوی عبدالعزیز جیسےلوگ تو ان کے حامی جبکہ کچھ اور مولوی اس معاملے پہ دہشت گردوں کی مذمت کرنے کی بجائے ان کے بارے میں خاموشی اختیار کرتے ہیں جس سے اس گروہ کے نوجوان دہشت گردی کی جانب مائل ہوتے ہیں ۔ایسے لوگوں کے سامنے معصوم بچوں کی لاشیں رکھ دی جائیں اور پھر کہا جائے کہ … Continue reading دہشت گردی کی حامی لابی ۔زید حامدکا تجزیہ

قائد اعظم اور پاکستان کے خلاف سرکردہ دیوبندی عالم مولانا محمود مدنی کی تکلیف دہ باتیں

مولانا محمود مدنی جمیت علما ہند کے جنرل سیکرٹری ہیں (اسی جماعت کی پاکستانی شاخ کی قیادت مولانا فضل الرحمن کرتے ہیں) ، دارالعلوم دیوبند بھارت سے فارغ التحصیل ہیں، اور کانگریسی ہندو لابی کے حامی ہیں، ایک انڈین ٹاک شو میں مولانا مدنی نے قائداعظم محمد علی جناح، پاکستان اور دو قومی نظریہ کے بارے میں جو نفرت انگیز زبان استعمال کی، اسے آپ اس مختصر ویڈیو میں ملاحظہ کر سکتے ہیں – مولانا مدنی نے کہا: “جناح کی فوٹو علی گڑھ یونیورسٹی سے ہٹا دینی چاہیے، اس تصویر کا لگا رہنا نہ بھارت کے حق میں ہے اور … Continue reading قائد اعظم اور پاکستان کے خلاف سرکردہ دیوبندی عالم مولانا محمود مدنی کی تکلیف دہ باتیں

ایک تصویر جس میں پاکستان میں مذہبی انتہا پسندی اورتکفیری دہشتگردی کی پوری تاریخ رقم ہے

شہید امجد صابری اور شہید علی رضا عابدی، دونوں دو مختلف فرقوں سے تعلق رکھتے تھا، ایک صوفی المشرب اہلسنت اور دوسرا شیعہ۔ دونوں محبت اہلبیت اور علی ابن ابی طالب کی ولا سے سرشار تھے، دونوں دہشتگردی کی نذر ہوئے۔ غور فرمائیں کہ وہ کون سی فکر ہے جو ان کے قتل میں ملوث ہے، کون ہے جو مسلسل ان دو مکاتب فکر کے خلاف زہر آلود نفرت انگیز مہم چلاتا ہے اور ان کے خلاف شرک، قبر پرستی اور کفر کے فتوے صادر کرتا ہے۔ تکفیری سوچ سنی اور شیعہ دونوں کی دشمن ہے اور پاکستان اور اسلام … Continue reading ایک تصویر جس میں پاکستان میں مذہبی انتہا پسندی اورتکفیری دہشتگردی کی پوری تاریخ رقم ہے

پاکستان کےقومی پرچم کی پرچم کشائی مولانا شبیر احمد عثمانی نے نہیں بلکہ قائد اعظم نے خود کی تھی – ڈاکٹر صفدر محمود

ایک وضاحتی کالم – ڈاکٹر صفدر محمود میں نے یہ بات متعدد بار لکھی ہے کہ تحقیق میں کوئی حرف آخر نہیں ہوتا۔ میں صرف یہ لکھتا ہی نہیں بلکہ اِس پر خلوص نیت سے یقین بھی رکھتا ہوں۔ سچ یہ ہے کہ میں فقط ایک طالب علم ہوں۔ محقق، دانشور، روحانی یا عالم و فاضل ہونے کا نہ اہل ہوں اور نہ ہی اِس حسنِ ظن میں مبتلا ہوں۔ میں نے اکثر محققین، عالم و فاضل لکھاریوں اور شہرت یافتہ دانشوروں کو علم و تحقیق کی روشن خیالی میں عقلِ کل اور حرفِ آخر بنتے دیکھا ہے اور اب … Continue reading پاکستان کےقومی پرچم کی پرچم کشائی مولانا شبیر احمد عثمانی نے نہیں بلکہ قائد اعظم نے خود کی تھی – ڈاکٹر صفدر محمود

رعنا لیاقت علی: کماؤں کی ‘برہمن’ لڑکی جو پاکستان کی خاتونِ اول بنی

ریحان فضل بی بی سی ہندی، دہلی امریکہ میں پاکستان کے سابق سفیر جمشید مارکر کہتے تھے کہ رعنا لیاقت علی جب کسی کمرے میں داخل ہوتی تھیں تو وہ کمرہ خود ہی روشن ہو اٹھتا تھا۔ ایک مرتبہ برج کھیلتے ہوئے لیاقت علی نے اپنے رہنما محمد علی جناح سے کہا کہ آپ اپنی تنہائی دور کرنے کے لیے دوسری شادی کیوں نہیں کر لیتے؟ جناح نے تپاک سے کہا ‘مجھے دوسری رعنا لا دو، میں فوراً شادی کر لوں گا‘۔ رعنا لیاقت علی کی پیدائش 13 فروری 1905 میں شمالی ہند کے علاقے الموڑہ میں ہوئی تھی اور … Continue reading رعنا لیاقت علی: کماؤں کی ‘برہمن’ لڑکی جو پاکستان کی خاتونِ اول بنی

Divisions, divides and diversity in Islam in South Asia

Ali Usman Qasmi Aziz Ahmad was probably the first scholar to write a cultural history of Islam in India. His 1961 book, Studies in Islamic Culture in the Indian Environment, is a path-breaking survey of 1,200 years of Muslim presence in the Indian subcontinent. It explores how, throughout this time, there has been opposition as well as accommodation, even borrowing and assimilation, between Muslims and non-Muslims living in this part of the world. Ahmad wrote another pioneering work, Islamic Modernism in India and Pakistan, 1857-1964, that deals with the impacts of modernity and colonialism on Muslims living in the two countries. Even … Continue reading Divisions, divides and diversity in Islam in South Asia

فقیر عبدالقادر بیدل‘ معروف صوفی بزرگ جو ادیب اور ہفت زبان شاعر بھی تھے

چوہدری محمد ارشاد پانچ ہزار سال پرانی تہذیب کی وارث سندھ کی دھرتی اولیاء، صوفیاء اور بزرگان دین کا مسکن رہی ہے۔ حضرت لعل شہباز قلندر، شاہ عبداللطیف بھٹائی، حضرت سچل سرمست جیسے جلیل القدر بزرگ اور صوفی شعراء نے امن، اخوت، محبت، بھائی چارے اور ہم آہنگی کا درس دیا۔ ایسی ہی ایک ہستی ہفت زباں صوفی شاعر فقیر قادر بخش بیدل بیکس کی ہے۔وہ اپنے دور میں سندھ کے ایک عظیم شاعر اور صوفی بزرگ گزرے ہیں۔ ان کی تحریریں آج بھی لوگوں کے لئے مشعل راہ ہیں۔ ہفت زباں شاعر فقیر قادر بخش بیدل نے سکھر کے … Continue reading فقیر عبدالقادر بیدل‘ معروف صوفی بزرگ جو ادیب اور ہفت زبان شاعر بھی تھے

صوفی درگاہوں میں خواتین کی گائیکی اور رقص کی روایت ریاض سہیلبی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی 6 مار چ 2018 بی بی سی اردو منچھر جھیل کے کنارے پر ایک زبوں حال مزار کے قریب لوگوں کا مجمع لگا ہے جبکہ ایک خاتون گا رہی ہے اور دو خواتین رقص کر رہی ہیں، ساتھ میں سازندوں نے ہاتھوں میں یکتارا، ہارمونیم اور ڈھول اٹھا رکھے ہیں۔ یہ گروپ ’متھن شاہ‘ کے مزار میں داخل ہوکر سلامی دیتا ہے اور باہر آکر محفل موسیقی کا آغاز کرتا ہے۔ سندھ میں صوفی درگاہوں پر میلوں کے موقعے پر گائیکی اور … Continue reading